زمرہ: سیاست

Pakistan – a wonderful destination for adventure tourism

Pakistan – a wonderful destination for adventure tourism

ISLAMABAD: Those who think that Pakistan is all about historical sites, great cuisine, exciting cities and bustling bazaars may be not be aware that Pakistan is also an excellent destination to enjoy adventure sports.

There are a number of adventure sport destinations in Pakistan, which one can travel to. And the range of the adventure sports in the country is immense.

From jeep safari to mountaineering, from fishing to river rafting, from skiing to trekking, Pakistan is endowed with such geographical features that make it excellent tourist destination for adventure sports.

Pakistan is home to some tailor made destinations for adventure sports be it jeep safari, river rafting, mountaineering or trekking. The country is home to five of fourteen peaks above 8,000 metres – K-2, Nangaparbat, G-I & II and Broadpeak. Besides, 70 percent of mountain peaks above 7,000 metres are also located in Pakistan.

The northern areas offer wonderful opportunities for various adventure sports. Its rivers tumbling down from the snow capped mountains and glaciers are great for water sports like river rafting, canoeing, sailing and kayaking. There are mountains that offer wonderful trekking trails that lead to some beautiful spots.

Rivers Chitral, Indus, Gilgit, Swat, Hunza, Kunar and the Neelum offer exciting opportunities for water sports.

Pakistan also offers beautiful spots for skiing. Malam Jabba is one of the best skiing resort. If jeep safari is what gives one thrill, perhaps there is hardly any destination as exciting as the Northern Areas. There are various destinations in northern Pakistan that provide wonderful opportunities for jeep safaris. Some of the destinations that can be visited for jeep safari include Gilgit, Hunza, Shandur, Sust and Skardu. Horse and camel safaris are other two exciting activities that one can enjoy on adventure tours to Pakistan. Tour to Pakistan brings complete information on various tourist destinations in Pakistan. It promises to offer all the help to make the trip an exciting and memorable affair. app

Advertisements

پاکستان میں17 لاکھ افراد غلامانہ طرز زندگی گزار رہے ہیں, ،روزنامہ جنگ

منگل‏، 02‏ دسمبر‏، 2008

لاہور(رپورٹ :ڈویلپمنٹ رپورٹنگ سیل) آج پوری دنیامیں غلامیت کے خاتمے کا عالمی دن منایا جارہاہے لیکن دوسری جانب اکسویں صدی میں بھی غربت کے باعث ترقی پذیر ممالک میں غلامانہ طرز کی جھلک عام نظر آتی ہے کم آمدنی والے کئی ممالک میں یا تو جبری مشقت کے باعث انسان ذہنی وجسمانی لحاظ سے جکڑا ہواہے یا پھر وہ فروخت ہوکر دولت مندوں کی ہوس کا نشانہ بنتا ہے۔جنگ ڈویلپمنٹ رپورٹنگ سیل کی رپورٹ کے مطابقپاکستان میں 17 لاکھ افراد غلامانہ طرز زندگی گزار رہے ہیں، بالخصوص بھٹہ مزدوروں سے16 تا18 گھنٹے روزانہ کام لیاجارہا ہے، ان مزدورں کی رجسٹریشن ہوتی ہے نہ ان کے شناختی کارڈ بنتے ہیں، دنیا میں 8سے 9لاکھ افراد سالانہ جبری مشقت اور جنسی سرگرمیوں کیلئے فروخت کئے جاتے ہیں جن کا 80فیصد خواتین پر مشتمل ہے اورایسی خواتین کا 70فیصد جنسی حوس کا نشانہ بنتی ہیں۔ جنگ ڈویلپمنٹ رپورٹنگ سیل نے مختلف ذرائع سے جو اعدادوشمار حاصل کئے ہیں ان کے مطابق آج بھی دنیا میں 2کروڑ 70لاکھ افراد غلامانہ طر ز زندگی گزارنے پر مجبور ہیں جبکہ ایک کروڑ 25لاکھ افراد جبری مشقت کررہے ہیں۔ 84لاکھ بچے بھی غلامانہ طرز زندگی گزاررہے ہیں یہ بچے یا تو سمگل کردیئے جاتے ہیں یا پھر انہیں جنسی مقاصد کیلئے استعمال کیاجاتاہے۔ سالانہ 12لاکھ بچے مزدوری یا جنسی مقاصد کیلئے سمگل کردیئے جاتے ہیں۔ دنیا میں غلامانہ زندگی گزارنے والے افراد کی بڑی تعداد کا تعلق جنوبی ایشیاء کے خطے سے ہے جو بھارت ، پاکستان ، بنگلہ دیش اور نیپال میں موجود ہیں۔ ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان کی رپورٹ برائے2007کے مطابق پاکستان میں 17لاکھ افراد غلامانہ طرز زندگی گزاررہے ہیں یہ افراد بنیادی حقوق سے محروم ہیں اور انہیں اپنے حقوق کے بارے میں کسی قسم کی آگاہی نہیں۔ بھٹہ مالکان پورے خاندان سے انتہائی کم معاوضے پر کام لیتے ہیں اور بعض اوقات ایک خاندان کئی سالوں تک غلامانہ زندگی گزارنے پر مجبور ہوتاہے۔ پاکستان اور بھارت میں باونڈڈ لیبر کے نام پر اس طرز کی غلامی نما مزدوری اپنی بد ترین شکل میں موجود ہے۔ عالمی سطح پر 20لاکھ بچے انتہائی خطرناک ماحول میں مختلف صنعتوں کا حصہ ہیں جبکہ سالانہ 22ہزار بچے کام کرنے کے دوران ہلاک ہوجاتے ہیں۔ ملک میں لیبر فورس کا 7فیصد بیماری کے دوران بھی کام کرتے ہیں جو مختلف حادثات کے دوران زخمی ہوجاتے ہیں ۔ملک میں سرجیکل انڈسٹری کے ساتھ منسلک بچے انتہائی خطرناک ماحول میں کام کررہے ہیں۔ یونیسف کے مطابق 57لاکھ بچے بیگار کیمپوں میں غلامانہ طرز سے کام کرنے پر مجبور ہیں ۔ 

Govt convenes all-party conferenceحکومت کی جانب سے کل جماعتی کانفرنس کا انعقاد, By Syed Irfan Raza

Govt convenes all-party conferenceحکومت کی جانب سے کل جماعتی کانفرنس کا انعقاد, By Syed Irfan Raza

Daily Dawn

ISLAMABAD, Nov 30: Political and diplomatic activities revolving round the possible fallout of the Mumbai carnage on Pakistan-India relations acquired a hectic pace on Sunday with President Asif Ali Zardari and Prime Minister Yousuf Raza Gilani going all out to defuse tension that many believe could bring South Asia on the verge of a conflict.

With disturbing signals emanating from New Delhi suggesting the Indian government’s attempt to raise the ante by discussing ‘all possible actions’, President Zardari and Prime Minister Gilani secured the support of a large number of politicians, including the main opposition leader Mian Nawaz Sharif, for the way they are handling the situation.

President Zardari contacted a number of world leaders to present Pakistan’s case and ask them to use their good offices to make India realise that it could be suicidal to indulge in a blame-game even before the completion of initial investigations.

The first bit of somewhat encouraging news came from the armed forces when their spokesman said that no movement of Indian troops towards border areas had been noticed.

Some TV channels quoted the chief of Inter-Services Public Relations, Maj-Gen Athar Abbas, as saying that the army was ready for national defence and to handle any untoward situation.

Talking to AFP, Maj-Gen Abbas said: “We have seen reports in media suggesting suspension of ceasefire and movement of troops on the Indian side of the border. As far as the official authenticated reports are concerned, there is no such movement or mobilisation of troops. The ceasefire is holding.”

However, there are reports that the armed forces have been put on high alert in view of a possible military build-up by India along the border.

The prime minister has invited the heads of all political parties to a conference on national security on Tuesday to evolve consensus on how Pakistan should act in the prevailing situation and what steps should be taken if it gets worse.President Zardari called Afghan President Hamid Karzai, French President Nicolas Sarkozy and British Foreign Secretary David Miliband and sought their intervention for normalising the situation.

In another significant development, Prince Karim Aga Khan, the spiritual leader of the Ismaili community, arrived in Islamabad and he will meet President Zardari and Chief of the Army Staff Gen Ashfaq Parvez Kayani.

The president’s spokesman, Mr Farhatullah Babar, told Dawn that “the matter of regional security will also come under discussion” during the meeting between the Aga Khan and Mr Zardari on Monday.

Meanwhile, the Pakistan Muslim League-N extended full support to the government through a resolution it adopted at a meeting presided over by former prime minister Nawaz Sharif.

“We have assured the government of our complete support and we request the neighbouring country to stop accusing Pakistan of having links with the terrorists involved in the Mumbai carnage,” PML-N information secretary Ahsan Iqbal said.

He said a delegation of his party led by the Leader of the Opposition in the National Assembly, Chaudhry Nisar Ali Khan, would call on Prime Minister Gilani on Monday. He said the PML-N would attend the conference convened by the prime minister.

Prime Minister Gilani, who postponed his scheduled visit to Hong Kong, said he had received full support from all the democratic forces.

The leaders contacted on Sunday included former prime minister Mir Zafarullah Jamali, AJK Prime Minister Sardar Attique Ahmed Khan, Allama Sajid Naqvi, Chaudhry Pervaiz Elahi, Dr Abdul Malik, Israrullah Zehri, Munir Khan Orakzai, Shahid Bugti, Ismail Baladi and Mohammad Hanif Tayyab.

Foreign Minister Shah Mehmood Qureshi told an international channel that the Indian government had not given to Pakistan any evidence about the Mumbai incident.

“If the Indian government provides proof against any group or individual,

Pakistan will take action against them,” he said. He said good relations with India were in the interest of Pakistan.

پختونخواہ قوم کو تقسیم کرنے کی سازش ہے۔پاکستان مسلم لیگ (ن

Pakhtunkhwa’ a conspiracy to divide nation: PML-Nپختونخواہ قوم کو تقسیم کرنے کی سازش ہے۔پاکستان مسلم لیگ (ن 

Thursday, November 27, 2008, 11:20

Pakistan Muslim League-Nawaz (PML-N) has termed the renaming of the NWFP as Pakhtunkhwa a conspiracy to create a separate state at the behest of the United States. 

“The Awami National Party (ANP), in 1940 in Bannu, had already passed a resolution demanding a separate state. Now its government is trying to implement the plan,” PML-N President and Parliamentary Party Leader in the NWFP Assembly Pir Sabir Shah said after the party’s provincial executive committee meeting here on Wednesday.

Sabir Shah briefed newsmen on the details of the meeting he chaired and which was attended by the party’s central and provincial leaders, including former chief minister NWFP Sardar Mehtab Ahmad Khan, Saranjam Khan and others besides elected members.

The meeting discussed the political situation, the deteriorating law and order, US drone attacks and, what the PML-N leaders called, the killing of innocent citizens and decided to launch a mass contact movement by organising the first rally in Peshawar on November 28. Later, the party would hold protest meetings at Mardan, Kohistan, Chitral and others parts of the province to create awareness among the people.

Pir Sabir Shah said the maps of Greater Pakhtunistan and Greater Balochistan had already been published in a New York magazine and the ANP leadership was hatching a conspiracy to implement the plan of Greater Pakhtunistan, but his party would foil the nefarious designs of the anti-Pakistan forces.

Expressing concern over the PPP Co-chairperson Asif Ali Zardari’s support to Pakhtunkhwa, Sabir said the ANP should not have raised such a controversial issue at such a sensitive time. Both the federal and provincial governments, he said, should have worked for the solution of major problems of the people instead of raising such controversial issues, which would divide the nation. He said the people of Hazara have now started demanding Hazara as a separate province and he himself had heard such demands in public meetings.

The PML-N president said the ANP’s chief minister was confined only to the Chief Minister House, while the entire province was in flames, adding that he had written a letter to the chief minister, asking him to concentrate on improving law and order.

He clarified his party’s position, saying that he was not supporting the government and his party was in the opposition in the provincial assembly.He said former chief minister Akram Khan Durrani was not a true opposition leader and he had never taken his party into confidence on any issue.

Sabir Shah said his party’s legislators had extended their support to him whenever the opposition leader invited them on any issue.Similarly, the galloping price-hike and lawlessness had made people’s life miserable but the rulers had nothing to offer to the people, Sabir Shah added.

The PML-N leader took a strong exception to the statement of President Asif Zardari wherein he said that with the election of Obama as the US president, the situation in Pakistan would become normal.

He said the people of Pakistan had not elected Obama as president and he would look after the interests of the Americans. He ridiculed President Zardari’s statement seeking information from the US forces before attacks in Pakistan’s tribal areas and said it showed that Pakistani president wanted information to make burial arrangements for those killed in such attacks.

The PML-N leader termed the situation in Swat alarming and asked the government to stop the military operation in the valley.He said former president Pervez Musharraf should have been sent to jail, but the sitting rulers gave the former dictator protocol and safe exit.

Sabir Shah said MQM leaders were staging ‘dramas’ by making hue and cry over the reported Talibanisation in Karachi, adding that the MQM leaders were collecting weapons on this pretext.He rejected the Sindh government’s plan to register the people from Fata in Karachi. “We condemn and reject this move,” he added.

عدل و انصاف

بشکریہ روزنامہ جنگ ۔

پاکستان میں عدلیہ کو آزادی ملی نہ اچھے لوگوں کی حکمرانی آئی، صرف بے خوف ججوں کے آزادانہ فیصلے پارلیمنٹ کی بالادستی قائم رکھ سکتے ہیں،جسٹس افتخار

11/19/2008

نیویارک( رپورٹ: عظیم ایم میاں) معزول چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے کہا ہے کہ پاکستان میں عدلیہ کو آزادی ملی اور نہ اچھے لوگوں کی حکمرانی آئی، صرف بے خوف ججوں کے آزادانہ فیصلے ہی پارلیمنٹ کی بالادستی قائم رکھ سکتے ہیں، عدلیہ کی آزادی کی ساری تحریک میں بطور جج اور ایک شہری میرا کردار معمولی ہے، حقیقی اور بھرپور آواز پاکستانی عوام اور ساتھی وکلاء نے بلند کی، یکساں انصاف بے خوف جج ہی دے سکتے ہیں، ہر شہری کیلئے یکساں انصاف اور بے خوف ججوں کے فیصلے ہی دہشت گردی کا خاتمہ کر سکتے ہیں، پارلیمنٹ کی بالادستی اور انتظامیہ کے اختیارات اسی صورت میں قائم رہ سکتے ہیں کہ جب بے خوف اور آزاد جج عدالتی فیصلے دیں ورنہ پورا نظام بے معنی اور مفلوج ہو جاتا ہے، پاکستان میں عدلیہ کی آزادی کیلئے آواز اٹھانے پر امریکا اور وکلاء کی عالمی برادری کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہار نیویارک سٹی کی بار ایسوسی ایشن کی جانب سے شہر کے مرکزی اور معروف علاقے مین ہٹن میں معزول پاکستانی چیف جسٹس افتخار چوہدری کو نیویارک بار کی تاحیات اعزازی رکنیت دینے کیلئے ایک پروقار اور سادہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر انہوں نے کہا کہ اس اعزاز کے اصل حق دار پاکستانی عوام ہیں جنہوں نے عدلیہ کی آزادی اور بالادستی کیلئے میرا اور وکلاء کا بھرپور ساتھ دیا۔ تفصیلات کے مطابق جسٹس افتخار محمد چوہدری کو یہ اعزازی رکنیت 9 جنوری 2008ء کو دی گئی تھی تاہم پاکستان میں وکلاء کی جاری تحریک اور جسٹس افتخار پر پابندیوں اور مصروفیات کے باعث وہ امریکا نہ آسکے، لہٰذا یہ اعزازی رکنیت اور شیلڈ انہیں بار ایسوسی ایشن کی خاتون صدر پٹریشیا ہائنز اور نیویارک میں امریکی وفاقی جج جڈراکوف نے تقریب میں پیش کی، جس میں نیویارک کے پاکستانی۔ امریکن وکلاء ، نیویارک بار ایسوسی ایشن کے جڈ راکوف ممتاز اراکین اور ریاست نیویارک کے بعض جج بھی شریک ہوئے۔ گزشتہ دس سال میں جسٹس افتخار محمد چوہدری آٹھویں شخصیت ہیں جنہیں عدلیہ اور آئین و اصول کی خدمات کے اعتراف میں یہ رکنیت پیش کی گئی ہے ۔ یہ واضح نہیں ہو سکا کہ ان آٹھ شخصیات میں کتنے امریکی اور کتنے غیر ملکی شہری ہیں۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے نیویارک سٹی بار ایسوسی ایشن کی صدر پٹریشیا ہائینز نے جسٹس افتخار چوہدری کی جرأت اور قانون پرستی کی داد دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان کے چیف جسٹس عدلیہ کی بالادستی اور جرأت کے ساتھ اور اصولوں کی خاطر سختیاں برداشت کرتے رہے۔ آج ہمیں اپنے بار کی رکنیت تاحیات کا اعزاز پیش کرتے ہوئے خوشی محسوس ہو رہی ہے ۔ امریکا کی وفاقی عدالت کے جج جڈ راکوف نے تقریر کرتے ہوئے کہا کہ سابق صدر مشرف پرویز نے تو یہ سوچ کر افتخار چوہدری کو چیف جسٹس بنایا کہ وہ ان کیلئے حفاظت کا ذریعہ بنیں گے لیکن افتخار چوہدری نے عدلیہ کی بالادستی اور آئین کی حفاظت کا ذریعہ بننے کا جرأتمندانہ فیصلہ کیا۔ انہوں نے بتایا کہ گزشتہ 10 سال میں سات افراد کو یہ اعزازی رکنیت دی گئی ہے۔ جسٹس افتخار چوہدری کو ہمارے بار نے 9جنوری 2008ء کو یہ رکنیت دی تھی لیکن جسٹس افتخار اپنے گھر میں پابند سلاسل، نامساعد حالات اور وکلاء کی تحریک میں مصروف رہے لہٰذا ہمیں اس بات کی دوہری خوشی ہے کہ جسٹس افتخار چوہدری آج نیویارک میں ہیں اور یہ اعزاز حاصل کر رہے ہیں، ہم پاکستان کے وکلاء کی آئین و قانون کی بالادستی کیلئے تحریک پر داد دیتے ہیں۔

سیاسی عمل میں خواتین کا کردار

"سیاسی عمل میں چترالی خواتین کی محرومیوں کے اسباب”

تحریر افسر خان

دنیابھرمیں خواتین نے ہردورمیںمختلف حیثیتوں میں اپنی مضبوطی ،اتحاد، تحمل مزاجی ، انصاف اور مسلسل ثابت قدمی کی خصوصیات سے پوری انسانیت کی تقدیربدل کررکھ دی۔ انہوں نے معاشرہ کی جانب سے متعین ماں،بیٹی،بیوی،بہو، ساس، خالہ ،پھوپھی، نند، دیورانی اور بہن کاکردارجس احسن طریقے سے نبھا رہی ہیں اس کی کیا مثال دی جا سکتی ہے ۔اور آج کے اس برق رفتا دور میں اپناحق استعمال کرتے ہوئے ایک ایسے فرد کی حیثیت اختیارکی جس کااپناذاتی تشخص اور ذاتی رائے ہو۔

کسی ملک کی سربراہی ہو یا وزارت ، ڈاکٹرز،وکلا،آجرین،ہوا بازی یاانسانی حقوق کی سرگرم کارکن یہ پیشے ان خواتین کیلئے مشکل نہیں ہیں جنہوں نے مردوں کے زیرتسلط ہونے کے باوجود اپنامقام پیداکیا۔خواتین بحری حیاتیات کی ماہر ،خلاباز،علم جرائم کی ماہر،سیاستدان،مزاح نگار اور دیگرپیشوں میں پیش پیش ہیں۔لیکن خواتین کاان شعبوں میں داخلہ آسان نہیں تھااس کے لئے انہیں محنت کرنی پڑی اور ایک معاون مرد باپ، بھائی، شوہر کی روپ میں ان کی حوصلہ افزائی کرتا رہا۔ انہیں پہلے ان پیشوں میں اپنی مہارت دکھانی پڑی اور ثابت کیاکہ معاشرہ نے جوکردار ان کے سپرد کیا ہے وہ اسکی پوری طرح اہل ہیں۔پاکستانی خواتین کی مثال لیں آپ کوان میں بے پناہ ہمت وجرأت اور پیشہ ورانہ ذکاوت وفراست کی ایسی مثالیں نظرآئیں گی جو دوسروں بشمول مردوںکیلئے بھی قابل تقلیدہیں۔بے نظیر بھٹو، باپسی سدھوا سے بلقیس ایدھی،ثریا بجیا، وادی کیلاش کی پھر تیلی اور ذہین خاتون لکشن بی بی تک متعدد خواتین ہیں جومختلف شعبوں میں سنجیدگی سے جدوجہدکرکے اپناکرداراداکررہی ہیں،ان کامیاب خواتین کی ایک طویل فہرست ہے ۔اگر آپ پاکستان سے باہر جھانگ کر دیکھیں تو آپ کو کامیاب خواتین کی ایک لمبی قطانظر آئے گی ۔آپ روزانہ اپنے اردگردایسی بہت سی خواتین دیکھتے ہیں یہ خواتین آہستہ آہستہ اوسط درجہ سے بلندہوکرنمایاں حیثیت اختیارکرلیتی ہیں۔وہ صورتحال کوجوں کاتوں برقراررکھنے پر استفہامیہ اندازاختیارکرتے ہوئے اپنی انفرادیت پیداکرنے کی راہ نکالتی ہیں۔ہمارے ملک میں ایسی خواتین ہیں جن پرہم بہترین استادکرشمہ سازشخصیت کی سفیر،بہترین سرجن اورصحافی کی حیثیت سے فخرکرسکتے ہیں۔

مزیدبراںہمارے پاس اپنی کامیاب خواتین کوسراہنے اور انہیں خراج تحسین پیش کرنے کاکافی جوازموجودہے۔کسی تکلف کے بغیرہم کہہ سکتے ہیں کہ جہاں تک امتیازی رویہ کوچیلنج کرنے کاتعلق ہے مغربی خواتین کواتنی مشکلات کاسامنانہیں کرناپڑتا۔ہماری خواتین کومعاشرہ میں مثبت تبدیلی لانے کیلئے تمام حلقوں کی جانب سے زبردست بائوکاسامناکرناپڑتاہے۔ پاکستانی معاشرہ خصوصاً صوبہ سرحد میں خواتین کوہولناک رویہ کے مسائل کاسامناکرناپڑتاہے،سماجی طورپر ممنوعہ رواج اور پابندیاں شامل ہیںجنکی دنیامیں ابھی ابتدانظرآتی ہے۔

ہم ایک ایسے معاشرے میں زندہ ہیں جہاں کام کرنے کیلئے خواتین کی حوصلہ افزائی نہیں کی جاتی انہیں صرف اس مفروضے پرقتل تک کردیاجاتاہے کہ کسی مردکے ساتھ نظرآئیں جوان کے خاندان کانہیں تھا خواہ مذکورہ شخص خاتون سے عمرمیںبیس سال بڑایابیس سال چھوٹاہی کیوں نہ ہواور خواہ لڑکی خودکمسن ہو۔ ریکارڈپرآنے والے والے بیشترواقعات میں غیرت کے نام پرقتل ذاتی انتقام کے نتیجہ میں رونماہونے والے واقعات ہوتے ہیں۔ اکثر سخت قسم کے مذہبی سوچ رکھنے والے خواتین کو گھر کی چار دیواری تک محدود رکھتے ہیں۔ ان پر گھرکی دہلیز پار کرنے پر پاپندی ہوتی ہے۔یہاں تک کہ وہ اپنی مرضی کے ساتھ اپنے رشتہ داروں اور عزیزوں اور آڑوس پڑوس میں بھی نہیں جا پاتی۔ اس طرح عورت کوسب سے آسانی سے قربانی کابکراسمجھاجاتاہے۔ایسے ماحول میں کسی خاتون کے لئے کسی سیاسی عمل یا اجتماعی محفلوں اور اجتماعات میں شرکت نا ممکن سی بات ہے ۔اگرمیڈیا،سوشل ویلفیئرآگنائزیشنز،این جی اوز اورانسانی حقوق کیلئے سرگرمی سے کام کرنے والی خواتین تنظیمیں جنہوں نے یہ مسئلہ حکومت اور بین الاقوامی سطح پرنہ اٹھایاہوتاتوایسے معاشرے میں جس میں مردوں کاتسلط ہوغیرت کے نام پرقتل آرام سے مشغلہ کے طورپرجاری رہتا۔اور پاکستان اور دنیا بھر میں خواتین غلامی کی زندگی گزار رہی ہوتیں۔

اللہ تعالیٰ نے مرد اور عورت کو برابری کی سطح پر حقوق دئیی ہیں۔قرآن مجید میں ارشاد ہے کہ،اے لوگو!ہم نے تم کو ایک مرد اور ایک وعورت سے پیدا کیااور تمہاری قومیں اور قبیلے بنائے، تاکہ ایک دوسرے کو شناخت کرو،اور تم میںمیرے ہاں بہتر وہ ہے جو زیادہ پرہیز گار ہے۔ بے شک خدا سب کچھ جاننے والا (اور) سب سے خبر دار ہے۔[Al-Qur’an 49]

صوبہ سرحد کے ایسے ماحول میں خواہ وہ چترال ہو یا کوئی اورشہر یا قصبہ جہاں اب بھی خواتین کا گھر سے نکلنا معیوب سمجھا جاتا ہے، اور خواتین کو صرف عزت کی علامت سمجھا جاتا ہے ایسے ماحول میں کسی خاتون کے لئے سیاسی عمل میں شرکت اوراس میں عروج کے منازل طے کرنا کوئی آسان بات نہیں، سرحد کی پسماندگی اور دقیانوسی سوچ کے آگے ایسا حوصلہ اور ہمت کی ضرورت ہے جوان کی ترقی و ذہنی نشونماکی راہ میں کھڑی چٹان جیسی رسم و رواج ، روایات اور سر قبیلی نظام کی رکاوٹ کو توڑ سکے ۔

ہم ہمیشہ یہ جوازپیش کرتے ہیں کہ ہمارے معاشرے میں عورت کو مغربی عورت کے مقابلے میں زیادہ استحقاق حاصل ہے جس کے ضمن اس قسم کی مثالیں دیتے ہیں کہ بلوں کی ادائیگی کیلئے بینک پرعلیحدہ لائن ہوتی ہے،ٹائرپنکچرہونے کی صورت میں کارکودھکالگانے اور بس میں بیٹھاہوامردخاتون کواپنی نشست پیش کردیتاہے لیکن یہ وہی معاشرہ ہے جس میں عورت پر تشددکیاجاتاہے اور تشددکے مرتکب افرادکوچھوڑدیاجاتاہے۔اخبارات روزانہ اس قسم کی خبروں سے بھرے ہوتے ہیںکہ قتل یادشمن کی بے حرمتی کیلئے عورتوں کاتبادلہ کیاگیا۔عورتوں کوتشدداور بدسلوکی کانشانہ بنایاجاتاہے کیونکہ جرگہ اس قسم کے احکامات جاری کرتاہے اور عورتوں کوخاندانی قرض کی ادائیگی کیلئے فروخت تک کردیاجاتاہے۔ہماری ثقافت خصوصاً دیہی علاقوں کی ثقافت زنجیروں میں جکڑی ہوتی ہے جو قرونِ اولیٰ کی ثقافت سے قریب ترین نظرآتی ہے۔

چترالی خواتین کی سیاسی عمل سے محرومی کے بہت سے اسباب و عوامل ہیں۔چترال کے اندر ایسی خواتین کی شدید کمی ہے جن کے اندر لیڈرشپ کی قابلیت ہو یہ صرف اس وجہ سے ہے کہ خواتین کو آزادی حق رائے دہی اور خواتین کی حوصلہ افزائی کی رواج نہیں ہے اور وہ آزادانہ طور پر اپنی رائے قائم نہیں کرسکتیں، یا کسی قسم کے سیاسی فیصلہ سازی کے عمل میں بلا جھجک شریک نہیں ہوسکتیں۔خیرتعلیم یافتہ خواتین کی کمی تو نہیں لیکن ان میں خوداعتمادی، فیصلہ سازی کی اہلیت کی کمی ہے جسے دور کرنے کے لئے روشن خیال باپ ، بھائی یا شوہر کا ساتھ ہونا ضروری ہے ۔مرد حضرات کی ان پر تسلط کی وجہ سے وہ آزادی کے ساتھ اپنی رائے کا اظہار نہیں کر پاتیں۔عوامی طریقہ کارمیں خواتین کی نمائندگی نہ ہونے کے برابر ہے۔ضابطہ بندی ، عوامی کاموں، ترجیحات کے تعین، منصوبہ سازی ، ترقیاتی کاموں کی انجام دہی اور تشخیص مالیت میں خواتین کوشریک نہیں کیا جاتا ہے۔صوبہ سرحد کا سیاسی سسٹم میں رجلیت/مردانہ پن کا راج ہے۔رشوت خوری بد دیانتی اور خرد برد اور پیسے کی سیاست بھی خواتین کو سیاسی عمل میں شرکت سے باز رکھتی ہے۔عورتوں کو ہمارے ملک میں حق رائے دہی سے ایک عرصہ تک محروم رکھا گیا اور چترال میں یہ سلسلہ تا حال جاری ہے، اسکی کئی وجوہات سمجھ میں آتی ہیں، مثلاً دقیانوسی سوچ، مذہبی روایات، ثقافت۔ اکثر لوگوں کا خیال ہے کہ عورتوں کا سیاست میں حصہ لینا گھر کا سکون برباد کردے گا اور خاندان کا ادارہ بد نظمی اور انتشار کا شکار ہوجائے ۔حق رائے دہی میں شوہر اور زن میں اختلافات پیدا ہوتے ہیں۔چترالی خواتین کی سیاسی عمل میں حصہ نہ لینے کی اور بھی وجوہات ہیں ، معاشی معاملات میں خواتین خود کفیل نہیں ہوتی ہیں بلکہ وہ مردوں پر انحصار رکرتی ہیں چنانچہ اس امر نے عوتوں کو حق رائے دہی سے محروم کرنے میں تقویت بہم پہنچائی ۔تاہم اب حالات کو بدلنے کی ضرورت ہے آجکل تقریباً ہر شعبہ میں عورتیں مردوں کے شانہ بشانہ کام کر رہی ہیں وہ مختلف کارخانوں اور دفتروں میں کام کرتی ہیں ۔ انہوں نے ہر شعبہ میں اعلیٰ سے اعلیٰ تعلیم حاصل کی ہے اور کر رہی ہیںاور مزید یہ کہ دو عالمی جنگوں میں عورتوں نے جو خدمات انجام دیں اس امر نے بھی عورتوں کے اس دعوے کو تقویت دی ہے کہ جن کی بناء پر امتیاز کی پالیسی انسانیت اور سماجی عدل کے منافی ہے۔ چنانچہ جمہوری ملکوں میں عورتوں کے حقوق مردوں کے برابر تسلیم کرتے ہوئے حق رائے دہی میں عورتوں کو بھی حق رائے دہی کا حق ملنا چاہئے۔دیہی علاقوں میں عورتیں گھریلو معاملات میں زیادہ دلچسپی لیتی ہیں اور ان میں اکثریت ان پڑھ ہوتی ہیں۔ ان کو بھی حق رائے دہی حاصل ہونا چاہئے، اور ان کی تربیت کا انتظام ہونا چاہئے۔ عام طور پر حق رائے دہی میں میں بھی وہ اپنی رائے دہی کا حق استعمال گھر کے مردوں کی مرضی پر کرتی ہیں۔انہیں حق رائے دہی حاصل ہونا چاہئے تاکہ وہ اپنے لئے مناسب لیڈ ر منتخب کرسکیں اور سیاسی عمل میں شرکت کی خواہش مند خواتین کو سیاسی تربیت کا اہتمام ہونا چاہئے۔

نما نہاد مذہبی اسکالر ز نے اسلام کو انتہائی محدود کر کے رکھ دیا ہے۔خواتین کو ان کے حقوق سے محروم رکھنے میں کو ئی کسر نہیں چھوڑی ہے۔وہ خواتین کو عزت کی علامت سمجھتے ہیں۔مذہبی رہنمائوں اور اسکالرز کو چاہئے کہ مذہب اسلام کی صحیح ترویج کریں اور خواتین کو ان کے حقوق سے آگاہ کریں۔ جیسا کہ حدیث مبارک ہے کہ علم حاصل کرنا مرد اور عورت دونوں پر فرض ہے۔ لہذا خواتین کے ساتھ مساوی بنیادوں پرسلوک برتا جائے۔

چترالی خواتین کوسیاسی عمل میںفغال بنانے کے لئے جی اوزاور این جی اوز کو اپنا کردار ادا کرنا چاہئے۔خواتین میںشغو ر اجاگر کر نے کے لئے ورکشاپس منعقد کریں۔ سکولوں اور کالجوں کی سطح پر لیچکرز اور دوسرے مقابلوں کا اہتمام کریں۔تقریری، مضمون نویسی اور مکالماتی مقابلے منعقد کرائے جائیں۔سیاست کو خدمت کا ذریعہ کے طور پر خواتین میں متعارف کرا یا جائے۔خواتین کو بوقت ضرورت مالی معاونت بھی فراہم کریں ۔ترقی پسند اور روشن خیال سیاسی جماعتیں مختلف سطحوں پر خواتین کے لئے سیٹیں مقرر کریں۔آج کے دور میں ابلاغ عامہ کی اہمیت کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا ، حکومت یا کسی بھی تنظیم کے لئے ابلاغ کے ذرائع کا استعمال لنگڑے کی بے ساکھی کی طرح ہے جس کے بغیر وہ ایک قدم بھی آگے نہیں بڑھ سکتے ۔ ذرائع ابلاغ کے نظام کو مخصوص، خود مختار اور غیر جانبدارانہ بناتے ہوئے ، انہیںاس مہم میں شامل کیا جائے۔انٹرنیٹ،مقامی ریڈیو، ٹیلی ویژن،بجلی اور ٹیلی فون کے بلوں کے پشت پر تشہیری مہم شروع کی جائے۔چترال میں خواتین کی شراکت داری کو وسیع تر بنانے کے لئے ابھی جامع حکمت عملی تیار کرنے کی ضرورت ہے۔وہ عوامل جو خواتین کے سیاسی عمل میں شرکت کی راہ میں رکاوٹ ہیں ، جیسے ثقافتی عوامل،دستوری عوامل کے اندر مثبت تبدیلی کی اشدضرورت ہے۔جس طرح وقتاً فوقتاً اقوام متحدہ کا ترقیاتی پروگرام کا ادارہ خواتین کی ترقی و عطائے اختیار کے لئے حکومت پاکستان کو فنڈز فراہم کر تا ہے اس کے دائرہ استعمال میں چترال کو بھی شامل کر لینا چاہئے۔ اکتوبر 2004ء میں اقوام متحدہ کے ترقیاتی پروگرام اور وزارت برائے ترقی خواتین پاکستان نے5.4ملین ڈالر ز کے ایک منصوبہ پر دستخط کئے ۔ اس منصوبے کا مقصد خواتین کے لئے "ویمنز پولیٹیکل سکول”کا قیام تھا۔اس قسم کے سکول کے قیام کا بنیادی اوراہم مقصد ان خواتین کے لئے سیاسیات کی تعلیم اور تربیت کا اہتمام کرنا ہے جو سیاسی عمل میں حصہ لیتی ہیں۔اس سکول کے قیام اوائل سالوں میں,40,000نئی تحصیل ، یونین کونسل اور ضلعی سطح پر منتخب ہونے والی خواتین کو تربیت دی گئی۔یہ سکول لاہور میں قائم کیا گیا ہے ۔ اس سکول میںمنتخب ہونے والی تحصیل اور یونین کونسل اور ضلعی سطح کی خواتین کو نسلرزتعلیم و تربیت دی جاتی ہے ۔اس پروگرام کے تحت (جس کا ناروے کی حکومت اور یو این ڈی پی مشترکہ طور پر چلا رہے ہیں ) تقریبا 80فیصد سے زائد ان منتخب خواتین کونسلرز کو جو مقامی حکومتوں کے انتخابات2000-2001میں منتخب ہوئی تھیں تربیت دی گئی۔ اور یہ سلسلہ آج تک جاری ہے۔ان چترالی خواتین کو اس قسم کے سکولوں میں تربیت کے لئے لے کر جانا چاہئے جو سیاسی عمل میں کردار ادا کرنا چاہتی ہیں۔

*ختم شد*

تحریر(بسلسلہ مقابلہ مضمون نویسی): افسر خان
ای میل:
afsar.kn@gmail.com
مضمون بعنوان "سیاسی عمل میں چترالی خواتین کی محرومیوں کے اسباب”

جنرل پرویز مشرف

Monday, 18 August 2008

مستعفی صدر سابق جنرل پرویز مشرف کے قوم سے خطاب کا مکمل متن

 اسلام آباد ۔ 18 اگست (اے پی پی) مستعفی صدر پرویز مشرف نے پیر کو قوم سے خطاب میں اپنے استعفیٰ کا اعلان کیا۔ مستعفی صدر کے قوم سے خطاب کا متن درج ذیل ہے۔

بسم اللہ الرحمن الرحیم
میرے عزیز ہم وطنو‘ بہنو اور بھائیو‘ السلام علیکمٓ

ملک آج جن حالات سے گزر رہا ہے مجھے بھی اور سب کو معلوم ہے۔ میں نے ملک کی باگ ڈور 9 سال قبل سنبھالی، اس وقت صورتحال کیا تھی، یہ ملک ایک دہشتگرد ریاست قرار دیاجانے والا تھا، یہ ملک معاشی لحاظ سے ناکام ریاست قرار دیا جانے والا تھا‘اس وقت میرے ذہن میں ایک ہی سوچ اور ایک ہی خیال تھا کہ میری اس ملک سے بے پناہ محبت ہے اور میں نے سوچا کہ تقدیر میں اس ملک کو بچانا اور اسے ترقی کی طرف لے کر جانا ہے تو میں اپنے تن، من ،دھن کی بازی لگا دوں گا،

  کی مدد شامل حال رہتی ہے اور تمام مشکلیں آسان ہوجاتی ہیں۔ پچھلے9 سالوں میں میں نے اسی جذبے کے ساتھ پاکستان کو جو درپیش چیلنجز اور بحران آئے ان کا سامنا کیا۔ میرے خیال میں نو سالوں میں جو چیلنجز پاکستان کے سامنے آئے ہیں، کسی اور وقت کسی اور پریڈ میں چیلنجز نہیں آئے ہیں ، چاہے وہ معاشی تباہی سے پاکستان کو بچانا ہو چاہئے وہ 2000ءکی خشک سالی کا مقابلہ کرنا ہو اور عوام کو مصیبتوں سے بچانا ہو، چاہے وہ 2001ءکی ہندوستان کے ساتھ محاذآرائی ہو، جس میں کہ جنگ کے بادل پاکستان کے آسمانوں پر پاکستان پر منڈلا رہے تھے10 مہینے کےلئے، اس چیلنج کا مقابلہ کرنا ہو ،چاہئے وہ نائن الیون کا سانحہ ہو اور اس کے ”فال آﺅٹس“ (اثرات) کے اس تمام خطے اور خاص طور پر پاکستان پر، چاہئے وہ 2005ءکا زلزلہ ہوجس سے شمالی علاقہ جات اور کشمیر کو ترقی کی طرف واپس اور چیلنج کو ایک موقع کی طرح تبدیل کرنا ہو، ان تمام بحرانوں میں اللہ تعالیٰ کی مدد شامل حال رہی۔ ہم نے ان تمام بحرانوں کا چیلنجزکا مقابلہ کیا اور ان سے نمٹا اور مجھے فخر ہے کہ ہم نے پاکستان اور اس کی عوام کو محفوظ رکھا۔ ہر کام میں میری نیت صاف رہی جو بھی حل دیکھا کسی مشکل کا ، کسی سانحہ کا ، کسی چیلنج کا اس میں ملک اور قوم کے مفادکو ہمیشہ ترجیح دی۔ ذات سے بالا تر ہوکر ملک کو اور عوام کو ترجیح دی۔ ”سب سے پہلے پاکستان“ کا نعرہ لگایا، یہ نعرہ قوم کو دیا، یہ محض دکھاوا نہیں تھا، یہ میرے دل کی گہرائیوں کی آواز تھی اور اب بھی یہی آوازرہے گی، مستقبل میں بھی آواز سب سے پہلے پاکستان ہی رہے گی۔ اس ملک کے لئے پاکستان کےلئے دو جنگیں لڑیں اور ہمیشہ خون کا نذرانہ دینے کےلئے تیار رہے اور مجھے فخر ہے کہ اب بھی میرے میں یہی جذبہ قائم ہے اور آئندہ بھی یہی جذبہ رہے گا۔ بدقسمتی ہماری کچھ عناصر اپنے ذاتی مفاد کو ملکی مفاد سے اوپر رکھتے ہیں۔ جھوٹے بے بنیاد الزامات میرے پر لگائے، جھوٹ کو سچ ، سچ کو جھوٹ بنانے کی کوشش کرتے رہے ، عوام کو دھوکہ دینے کی کوشش کی، عوام کو دھوکہ دیتے ہیں ، ان کو کبھی یہ احساس نہیں ہوا کہ میرے خلاف تو شاید ان کو کامیابی مل جائے لیکن اس کا ملک کو کتنا نقصان اٹھانا پڑے گا اس کا انہوں نے کبھی احساس نہیں کیا۔ یہ عناصر وہ تھے وہ ہیں جو کہتے ہیں کہ ہماری تمام پالیسیاں پچھلے نو سال غلط رہی ہیں،معاشی تباہی کی طرف ہم جارہے ہیں وہ پچھلے آٹھ سال کی پالیسیوں کی وجہ سے ہے ۔ یہاں تک کہ یہ بھی کہتے ہیں کہ بجلی کا بحران بھی ہماری پالیسیوں کی وجہ سے ہے۔ یہ بلکل غلط اور ملک کے ساتھ فریب ہے۔ کچھ حقائق میں قوم کے سامنے رکھنا چاہوں گا ۔ سب سے پہلے تو معیشت کی بات کرنا چاہوں گا ۔ یہ وقت اس کی تفصیلات میں جانے کا نہیں ہے اس کی تفصیلات ایک پیپر میں لکھ دی ہیں وہ میں ریلیز کردوں گا پریس میں کہ آپ سب کو کہ آپ سب آگاہ ہوجائیں کہ اصل صورتحال ہماری معیشت کی کیا ہے لیکن فی الحال میں یہ کہنا چاہوں گا کہ معیشت کے حوالے سے چند باتیں دسمبر 2007ءیعنی 8 مہینے پہلے پر ذرا نظر ڈالیں۔ کیا حالت تھی؟ معیشت بالکل ٹھیک تھی بلکہ پختہ تھی آٹھ مہینے پہلے ، جی ڈی پی ہماری 7 فیصد اوسط سے بڑھ رہی تھی اور 63 ارب ڈالر سے 160، 170 ارب ڈالر پر پہنچ گئی تھی ، ڈبل سے زیادہ، غیر ملکی زرمبادلہ کے ہمارے ذخائر 17 ارب ڈالر پر پہنچ گئے، ہماری ریونیو وصولیاں ایک ٹریلین یا ایک ہزار ارب روپے پر پہنچ گئی تھیں، ہماری سٹاک ایکسچینج انڈیکس تقریباً16 ہزار کے قریب پہنچ گیا تھا اور سب سے بڑی بات ایکسچینج ریٹ ایک ڈالر کی قیمت 8 سال تک 60 روپے کے اردگرد رہی۔ یہ ہماری اکانومی کی طاقت تھی اس کی وجہ سے یہ ساری (مین انڈیکیٹرز ) بنیادی اعشاریے جو میں نے آپ کو بتائے ہیں معاشی خوشحالی کے اعشاریے اور میں یہ آٹھ مہینے پہلے کی صورتحال آپ کو بتا رہا ہوں۔ اس وجہ سے دنیا کی اسسمنٹ ایجنسیز (Assesment Agencies) ، ایویلو ایٹنگ ایجنسیز (Evaluating Agencies) انہوں نے پاکستان کو این 11 میں قرار دیا ۔ این 11 ، نیکسٹ 11 اور یہ نیکسٹ 11 وہ ممالک دنیا کے جو برک ممالک کے بعد اور برک کون سے۔۔۔۔؟ برازیل، روس ، انڈیا، چین ، برکس۔۔۔ یہ چار تو پروگریسو اکانومیز ، ڈائی نیمک اکانومیز ان کے بعد پوری دنیا میں جو نیکسٹ 11 تھیں ان میں پاکستان کا بھی شمار کیا گیا ۔ یہ میں کوئی ایسی چیز نہیں بتا رہا ہوں اپنی طرف سے دنیا کے کسی ادارے میں معلوم کریں اور آپ کو پتہ ہوجائے گا صورتحال پاکستان کی، معیشت کی پختگی کی یہ صورتحال تھی آٹھ مہینے پہلے۔ یہ بحران معاشی بحران تو چھ مہینے پہلے شروع ہوا، ہماری فارن ایکسچینج ریزروز 10 ارب ڈالر سے بھی نیچے چلی گئیں۔ ایکسچینج ریٹ جو آٹھ سال سے 60 روپے پے تھا آج 77 روپے پے چلا گیا ہے ۔ سٹاک ایکسچینج جو 15 ہزار 700 یا 16 ہزار کے قریب تھا آج 10 ہزار کے ارد گرد منڈلا رہا ہے ۔ سرمایہ کی بیرون ملک منتقلی ہورہی ہے، لوگ اپنا سرمایہ بیرون ملک لے جارہے ہیں۔ سرمایہ کار چاہے وہ اپنے لوگ ہوں یا باہر کے انہوں نے اپنا ہاتھ روک لیا ہے۔ اس کا اثر غریب عوام پے مہنگائی کی صورت میں سامنے ہے، آٹا، دال، گھی کی قیمتیں، ڈیڑھ سے دگنی ہوگئی ہیں اور ان سے عام غریب عوام کو تکلیفیں اٹھانی پڑ رہی ہیں۔ یہ ضرور ہے کہ یہ انٹرنیشنل بحران جس کا پاکستان کو بھی سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ یہ انٹرنیشنل بحران تیل کی قیمتوں کی وجہ سے ، فوڈ گرینز خاص طور پر گندم کی قیمتوں کی وجہ سے اور ہمارے لئے کھانے کے تیل بھی جو ہم درآمد کرتے ہیں کی قیمتوں کی وجہ سے یہ ضرور ہماری معیشت کے اوپر اثر انداز ہوا لیکن چونکہ ہماری معیشت پختہ تھی 2007 ءنومبر تک ہم نے یہ تمام دھچکے ہماری معیشت نے سہے اور اسی لئے ایکسچینج ریٹ بھی مستحکم رہا، غیر ملکی زرمبادلہ کے ذخائر بھی بڑھتے رہے، سب معاملات معاشی لحاظ سے ٹھیک چلتے رہے لیکن اب یہ (ڈاﺅن سٹرائیک) تنزلی کی طرف بڑھ رہے ہیں تو یہ کہنا کہ یہ پالیسی نو سال سے ہی خراب تھی۔ میں سمجھتا ہوں کہ جو بھی یہ کہتا ہے پاکستان کیلئے نقصان دہ اور عوام کو گمراہ کرنے کے مترادف ہے۔ بجلی کا بحران جو میں تفصیلی میں نہیں جانا چاہتا ہوں بجلی کی طلب میں چونکہ معاشی حالت بہتر ہورہی تھی، عوام میں ترقی ہورہی تھی، پیسے زیادہ ہوگئے تھے، تو بجلی کی طلب میں بہت زیادہ اضافہ ہوا ہے پچھلے سات آٹھ سال میں اور میں اعتراف کروں گا کہ اس کے مقابلے میں ہم نے اپنی (بجلی کی) پیداواری صلاحیت کو اسی رفتار سے اور مقدار میں نہیں بڑھا سکے لیکن یہ کہنا کہ بجلی کی پیداواری صلاحیت میں کوئی اضافہ ہی نہیں ہوا پچھلے نو سالوں میں یہ سراسر غلط ہے۔ تین ہزار میگاواٹ سے زیادہ جنریشن گزشتہ نو سال میں ہوئی ہے لیکن جیسے میں نے کہا کہ ناکافی رہی کیونکہ اقتصادی ترقی بہت تیز تھی اور بجلی کی مانگ بہت زیادہ تھی۔ لیکن یہ کہنے کے بعد میں یہ کہنا چاہوں گا کہ اب کیا صورتحال ہے۔ جون 2007 ءمیں ہم 14 ہزار میگاواٹ بجلی پیدا کررہے تھے۔ جون 2008 ءمیں 10 ہزار میگاواٹ ہم پیدا کررہے ہیں ۔ کیوں؟ پیداواری صلاحیت وہی ہے لیکن ”سرکلر ڈیٹ“ کا مسئلہ ہوا ہوا ہے۔ پیسے نہیں مل رہے ہیں (بجلی)جنریٹ کرنے والی( نجی کمپنیاں ) آئی پی پیز کو اس لئے ان بجلی پیدا کرنے والی کمپنیوں نے بجلی پیدا کرنی کم کردی ہے تو لہذا یہ لوڈشیڈنگ زیادہ ہوگئی۔ یہ حائق میں نے اس لئے بتائے کہ قوم کو خاص طورپر یہ دو باتیں جن کے اوپر ایک فضا بنائی جارہی ہے کہ پچھلی حکومت نے گزشتہ نو سال کے دوران کچھ بھی نہیں کیا یہ سراسر جھوٹ ہے، قوم کے ساتھ فریب ہے اور میں یہ کہوں گا کہ یہ ساری باتیں کھلیں تو قوم کو اور ملک کو اور زیادہ نقصان ہونے کا خطرہ ہے۔

اس لئے ماضی کو چھوڑیں آئندہ کو مستقبل کو دیکھیں یہ جتنے بھی معاملے ہیں یہ حل ہوسکتے ہیں، حکومت کو ان کا حل ڈھونڈنا چاہئے اور میں چاہتا ہوں کہ اور میری یہ دعا ہے کہ اور یہ کیونکہ یقین بنایا جاسکتا ہے اس لئے میری دعا یہی ہے کہ حکومت مستقبل کی طرف دیکھ کر ان مسائل کا حل ڈھونڈے اور پاکستان کو آگے کی طرف لے کر جائے۔

بہنو اور بھائیو
کچھ اور حقائق میری نظر میں ہیں، میں ان پر نظر ڈالنا چاہوں گا۔ میرے خیال میں‘ میں یہ پورے اعتماد کے ساتھ کہہ سکتا ہوں کہ ہم نے ان پچھلے نوسالوں میں ہر شعبے کی بہتری کیلئے‘ ہر شعبے کے (مسائل) پر توجہ دی اور ہر شعبے میں پاکستان کو آگے ترقی کی طرف لے کر گئے۔ ترقیاتی منصوبوں کی سب سے پہلے میں بات کرنا چاہوں گا، بہت اختصار کے ساتھ ۔ سڑکوں کو دیکھیں، مواصلاتی نظام کو دیکھیں۔ ایک ایم ٹو بنائی گئی تھی راولپنڈی سے لاہور تک، اس کا بہت چرچا ہوا تھا، اس کے علاوہ مجھے نہیں نظر آتا کہ پہلے کیا گیا تھا اس ملک میں‘ لیکن میں یہ بتانا چاہتا ہوں کہ ان نو سالوں میں ساڑھے سات سو کلو میٹر کی کوسٹل ہائی وے بنائی گئی۔ ایم ون پشاور سے راولپنڈی اسلام آباد سڑک بنائی گئی، ایم تھری لاہور سے فیصل آباد کی طرف سڑک بنائی گئی، اسلام آباد مری ایکسپریس وے بنائی گئی۔ کراچی نادرن بائی پاس بنایا گیا۔ لواری ٹنل زیرتعمیر ہے، گوادر سے رتوڈیرو نوسوپچاس کلو میٹر کی سڑک زیر تعمیر ہے، شمالی علاقہ جات کی سڑکیں بنائی گئی ہیں جو چترال، گلگت ، ہنزہ، سکردو کو آپس میں ملاتی ہیں اور ان کے علاوہ کراچی ، لاہور، راولپنڈی، اسلام آباد کی طرف نظر ڈالیں تو سڑکوں کا نظام، کتنی ترقی کررہا ہے یہ آپ خود ہی دیکھ سکتے ہیں۔ آبی منصوبوں کو لے لیں، جس کے بارے میں کچھ نہیں کیا جارہا تھا اس سے پہلے، تیس سال گزر گئے ہم نے بڑے ڈیم بنائے تھے، اب اللہ تعالی کے فضل وکرم سے میرانی ڈیم تیار ہوگیا ہے، سبکزئی ڈیم تیار ہوگیا اس کا افتتاح ہوگیا، ست پارہ ڈیم سکردو میں تیار ہوکر اس کا افتتاح ہوگیا ، منگلا ڈیم کی اونچائی مکمل ہوگئی ہے آج کل ادھر پانی بھرا جارہا ہے ، تیس فٹ زیادہ پانی اس کی اب پانی ذخیرہ کرنے کی صلاحیت دوگنا ہوجائے گی اس سے جتنا زیادہ آبپاشی کو فائدہ ہوگا وہ آپ خود ہی جانتے ہیں۔ گومل زام ڈیم بنایا جارہا ہے ۔ اگر نہروں کو لیا جائے تو کچھی کینال بنایا جارہا ہے، ساٹھ ستر فیصد تک مکمل ہے تقریباً اس سے سات لاکھ ایکڑ زمین سیراب ہوگی۔ رینی کینال بن رہا ہے۔ ٹل کینال بن رہا ہے، یہ کینال جب بن جائیں گے اور ڈیمز جو بن گئے ہیں یہ مجموعی طورپر تین ملین ایکڑ زمین، غیر کاشت شدہ زمین کو سیراب کریں گے۔ اس کا ہماری زراعت کو کیا فائدہ ہوگا اس کا آپ خود اندازہ لگا لیں۔ تیس لاکھ ایکڑ غیر کاشت شدہ زمین اس سے سیراب ہوگی۔ اس کے علاوہ کھالوں کو پختہ کرنے کا عمل چاروں صوبوں میں جاری ہے۔ ستر فیصد مکمل ہوگیا ہے۔ 65 ارب روپے کا یہ منصوبہ تھا اس سے بھی کاشتکاروں کا فائدہ ہے جو آخری سرے پر کاشتکار ہیں ان کا فائدہ ہوگا۔ گوادر بندرگاہ بن چکی ہے، نئے ہوائی اڈے بن رہے ہیں کچھ بنائے گئے ہیں، کچھ کو بہتر بنایا گیا ہے، ٹیلی کمیونیکیشن میں انقلاب آگیا ہے۔ پانچ سال پہلے پانچ چھ لاکھ موبائل فون ہوتے تھے آج آٹھ کروڑ موبائل ٹیلی فون ہیں، ٹیلی ڈینسٹی 2.9فیصد تھی جو آج پچاس فیصد سے زائد ہے یہ ایک انقلاب ہے۔ یہ تھی ترقیاتی منصوبوں کی بات۔

صنعت کو دیکھیں ہرطرف صنعتیں‘ ہرطرف انڈسٹری پھیل رہی تھی لوگوں کو نوکریاں مل رہی تھیں، سرمایہ کاری آرہی تھی، اسی سے اندازہ لگائیں کہ کسی ہوٹل میں جائیں۔ تو سو فیصد کمرے بک ہوتے تھے اس کی وجہ سے اسلام آباد میں بھی چار پانچ ہوٹل بنائے جارہے تھے۔ یہ صورتحال تھی سرمایہ کاری کی پاکستان میں اور چونکہ انڈسٹری یہاں لگ رہی تھی، بیرون ملک سے لوگ آرہے تھے ۔ ملک کے اندر اور باہر سے لوگ صنعتیں لگا رہے تھے جس کی وجہ سے لوگوں کو نوکریاں مل رہی تھیں، جب نوکریاں مل رہی ہوں تو بیروزگاری میں کمی آتی ہے۔ بے روزگاری کام ہونے سے غربت کم ہوتی ہے۔ جو 34 فیصد سے کم ہوکر 24 فیصد پر آگئی۔ یہ صورتحال تھی عوام کی بہتری اور خوشحالی کی، تعلیم کے شعبے کو اگر دیکھا جائے تو اس کی تفصیلات میں میں نہیں جانا چاہتا ہوں ، خواندگی کے مسئلے کو بحال کررہے تھے ، ہم سیکنڈری، پرائمری سطح پر توجہ دے رہے تھے لیکن میں یہاں پر صرف دو چیزوں کا ذکر کروں گا۔ فنی تعلیم اور ووکیشنل تربیت اس کا جال پھیل رہا تھا نیوٹیک کے نیچے اس میں آرمی بھی شامل تھی ، بورڈ اس میں شامل تھے کئی ہزار بچے ووکیشنل ٹریننگ لے رہے تھے اور ان کو نوکریاں مل رہی تھیں، ہنر سیکھ رہے ہیں اور پیسے کما رہے ہیں۔ یہ صورتحال تھی ٹیکینکل ایجوکیشن اور ووکیشنل ایجوکیشن کی، ہائر ایجوکیشن کا اگر میں نے ذکر نہ کیا تو بہت زیادتی ہوجائے گی۔ ہائیرایجوکیشن میں دو باہر کی یونیورسٹیاں، ترقی یافتہ ممالک کی ،ہمارے ساتھ مشترکہ منصوبہ کے تحت آغاز کررہی تھیں۔ معاہدے ہورہے تھے اور وہ آنے کو تیار تھیں ،اراضی مختص کی جا چکی ہے ، پیسے مختص ہوچکے تھے، اور آگے کی ہم سوچ رہے تھے۔ اور اس کے علاوہ ایک پی ایچ ڈی پروگرام جو کہ ایک بہترین پروگرام ہے، جبکہ پہلے دو تین درجن پی ایچ ڈی سائنس اور انجینئرنگ کے مضامین میں ہوتے تھے آج فخر سے کہتا ہوں کہ ہمارا ہدف ڈیڑھ ہزار پی ایچ ڈی سالانہ 2010 ءتک بنایا ، اور میں یہ بات بھی فخر سے کہتا ہوں کہ تقریباً تین ساڑھے تین سو پی ایچ ڈی ملک واپس آگئے ہیں اور اس وقت تقریباً ایک ہزار پی ایچ ڈی پروگرام کے تحت تعلیم حاصل کررہے ہیں۔ یہ تعلیم کے شعبے میں۔

 پھر صحت کا شعبہ، اس میں میں یہی کہوں گا کہ ہم نے پرائمری اور سیکنڈری ہیلتھ کیئر کو ترجیح دی ، اس میں بے شمار بنیادی مراکز صحت ، تحصیل اور ڈسٹرکٹ ہسپتالوں کو قائم کیا اور سب سے بڑی بات کہ پینے کے صاف پانی کی فراہمی کا سلسلہ جس میں ہم نے پانی صاف کرنے کے پلانٹ پورے پاکستان بھر میں جال پھیلانے کا منصوبہ بنایا اس پر اربوں روپے لگائے گئے ہیں۔ ہمارا منصوبہ یہ تھا کہ یونین کونسل تک چھ ہزار پینے کا صاف پانی فراہم کرنے والے پلانٹ لگائے جائیں تاکہ یہ جو بیماریاں پھیلتی ہیں پینے کے پانی سے ، اس سے لوگوں کو عوام کو محفوظ رکھا جاسکے، یہ منصوبہ الگ تھا، خواتین کے شعبہ کی میں ضرور ذکر کرنا چاہوں گا، اس میں کیا ہوا ، خواتین کو بااختیار بنانے ، خواتین کی ترقی کیلئے میں سمجھتا ہوں کہ کوئی ملک ترقی نہیں کرسکتا جب تک کہ ہم خواتین کو جائز رول نہ دے سکیں اور برابری نہ دے سکیں۔ اس شعبہ میں ہم نے تین نکاتی حکمت عملی اختیار کی یعنی، سیاسی طورپر باختیار بنانا، معاشی طور پر بااختیار بنانا اور قوانین میں ترمیم لاکر خواتین کے ساتھ جو زیادتیاں ہورہی تھیں ، امتیازی قوانین کو ٹھیک کرنا۔ سیاسی طورپر بااختیار نہ بناتے تو آج جو بھی خواتین چاہے وہ اپوزیشن میں ہی بیٹھی ہوئی ہیں، چاہے وہ اتحادی حکومت کی ہیں سب کو پتہ ہونا چاہئے کہ ہماری پالیسی خواتین کو بااختیار بنانے کی جس میں ان کیلئے مخصوص نشستیں بنائی گئیں۔ لوکل گورنمنٹ لیول پر، صوبائی سطح پر، قومی سطح پر سینٹ میں جس کی وجہ سے وہ آج یہاں بیٹھی ہوئی ہیں اور اپنی آواز بلند کرسکتی ہیں۔ جیسا کہ معاشی طور پر انہیں بااختیار بنانے اور امتیازی قوانین کے بارے میں میں نے آپ کو بتا دیا، عزت کے نام پر قتل اور حدود آرڈیننس کو بھی ہم نے جائز طریقے سے اسلامی نظریے کے مطابق، اقلیتوں کا بھی ہم نے خیال رکھا ان کو بااختیار بنایا وہ بھی خوش ہیں۔ کیونکہ ہم نے ان کو مخلوط طرز انتخاب دے دیا اور دوہرا فائدہ دیا کہ وہ اپنی مخصوص نشستیں بھی قائم رکھیں۔ ثقافت اور ورثہ اس کو بھی ہم نے فروغ دیا اس کو بھی ہم نے نظرانداز نہیں کیا ، ہر ملک کو اپنے ورثہ اور ثقافت کا خیال رکھنا چاہئے تاکہ دنیا بھی دیکھے کہ ہم نئی عوام اور قوم نہیں ہیں ہماری ایک بھرپور تاریخ اور ثقافت ہے، اس میں آپ دیکھیں گے کہ ہم نے قائداعظم کے مزار کے ساتھ ہم نے بہتری کی جس کی وجہ سے وہاں ہزاروں لوگ ہر شام بیٹھ سکتے ہیں اور تفریح کر سکتے ہیں۔ اسلام آباد میں آپ دیکھیں یہاں ایک ثقافتی میوزیم بنایا جس میں ہزاروں لوگ جاتے ہیں اور دیکھتے ہیں کہ پاکستان کی تاریخ کیا ہے اور ہماری ثقافت کیا ہے، علاقائی ثقافت کیا ہے پھر ہم نے یہاں قومی یادگار بنائی ہے جو خوبصورت یادگار ہے لوگ وہاں جاتے ہیں اس کے ساتھ ایک اور میوزیم بنایا گیا ہے جو تحریک پاکستان کے بارے میں عوام کو اور آنے والی نسلوں کو بتائے گا، ہم نے یہاں ایک آرٹ گیلری کھولی ہے جو دنیا کے لوگ وہاں آتے ہیں اسے دیکھتے اور حیران ہوتے ہیں کہ یہ اتنی زبردست آرٹ گیلری کھولی ہے اگر آپ لاہور جائیں تو بہت خوبصورت باغ پاکستان بنایا جا رہا ہے، والٹن میں بنایا گیا ہے، یہ خوبصورت قومی یادگار ایک سال بن کر سامنے آیا ہے، کراچی جائیں تو وہاں نیپا ”نیشنل اکیڈمی آف پرفارمنگ آرٹ “ یہ ہم نے بنائی ہے اور اس میں فخر سے کہتا ہوں کہ آج پرفارمنگ آرٹ جسے بعض لوگ عزت کی نظر سے نہیں دیکھتے آج پڑھے لکھے جوان ، بچے بچیاں یہاں سے ڈگریاں لے رہے ہیں۔ تین سال کا کورس کر کے ڈگریاں لے رہے ہیں۔ یہ ہم نے پرفارمنگ آرٹ کو فروغ دیا ہے اور ثقافت اور ورثہ کو آگے لے کر گئے ہیں۔

جمہوریت کی بات بہت ہوتی ہے ،میں فوجی ہوں، میرے خلاف یہ ہے کہ میں جمہوریت کے خلاف ہوں میرے خیالات اس کے بالکل برعکس ہیں، پہلے جمہوریت کی بات ہوتی تھی وہ صرف بوتل پر جمہوریت کا لیبل تھا اس بوتل کے اندر جمہوریت کی روح نہیں ہوتی، ہم نے گذشتہ نو سال کے اندر اس میں جمہوریت کی روح ڈالی۔لوکل گورنمنٹ کا نظام متعارف کرایا، لوکل گورنمنٹ کا نظام وہ ہے جو پالیسی تشکیل دینے اور اس پر عملدرآمد میں جو خلاءتھا اس کو پورا کرتا ہے۔یہاں اسلام آباد میں یا صوبائی درالحکومتوں میں بیٹھ کر پالیسیاں تو بہت بنتی تھیں لیکن نچلی سطح پر ان پر عملدرآمد یونین کونسل کی سطح پر ، گاں کی سطح پر ان پر عملدرآمد نہیں ہوتا تھا۔یہ وہ ا یک ادارہ ہے جس نے عملدرآمد کے اس خلاءکو دور کیا۔ میری نظر میں جو شخص کوئی فرد اس کے خلاف بولتا ہے اس کے خلاف کارروائی کریںگے وہ میرے خیال میں پاکستان کے ساتھ پاکستان کو نقصان پہنچائے گا۔ہم نے دو انتخابات کرائے، سینٹ میں نیشنل اسمبلی اور صوبائی اسمبلیاں ، لوکل گورنمنٹ دو مرتبہ انتخابات کرائے اور تمام نے اپنی مدت پوری کی،اس کے علاوہ میں نے اقلیتوں اور خواتین کو با اختیار بنانے کے بارے میں پہلے بتا دیا ہے۔ یہ جمہوریت اس کی حقیقی روح کی میں بات کر رہا ہوں جسے ہم نے متعارف کرایا ہے۔ 
دنیا میں پاکستان کا رتبہ 1999ءسے پہلے کہاں تھا، پاکستان کی کوئی پہچان نہیں تھی، پاکستان کو کوئی جانتا نہیں تھا، پاکستان کی بات کوئی سنتا نہیں تھا، ہم نے پاکستان کو ایک رتبہ دیا،ہماری بات سنی جاتی ہے، فورمز پر جب ہم جاتے ہیں تو ہماری بات کی ا یک اہمیت ہوتی ہے تولہذا پاکستان کو دنیا کے نقشے پر ڈال دیا اور اس کو اہمیت دی، اس کو رتبہ دیا، جو آج بھی اﷲ تعالیٰ کے فضل وکرم سے ہے۔ امن وامان کی بات بہت ہوتی ہے ، میں یہ کہنا چاہوں گا کہ اس میں ہم اپنی پوری کوشش کی اور کچھ کامیابیاں ہوئیں، امن و امان نافذ کرنے والے اداروں کو ہم نے چاہے وہ سول آرمڈ فورسز ہوں یا پولیس، پولیس میں بھرتیوں میرٹ پر مبنی، ان کی تربیت اس میں بہتری ان کیلئے ساز وسامان، ان کی استعداد کار میں اضافہ، فرینزک لیبارٹریاں کھولیں اور سول آرمڈ فورسز کی ان کی آرگنائزیشن بہتر کی اور ان کیلئے اسلحہ اور تربیت بہتر بنائی اس کے نتیجے میں میرے خیال میں جو کامیابی ملی ہے وہ یہ ہے کہ پہلے جو بھی کوئی اہم شخصیت جاتی تھی تو اس کے آگے پیچھے کلاشنکوف پکڑے ہوئے ہڈ پہنے ہوئے بعض اوقات لوگ ان کے آگے پیچھے گھوم رہے ہوتے تھے سڑکوں اورہوائی اڈوں پراور سب لوگوں کو پریشان کرتے تھے اور اگر کوئی جلسہ ہو رہا ہے تو وہاں سو آدمی ہڈ پہنے ہوئے کلاشنکوف پکڑے ہوئے کھڑے ہوتے تھے، یہ کیسا ملک چل رہا تھا،وہ الحمد اﷲ سب سلسلہ ختم ہوگیا تھا،اسلحہ کی نمائش ، کلاشنکوف کی نمائش اور نقاب پوش لوگوں کی عوامی جلسوں میں سڑکوں پر کہیں نظر نہیں آتے تھے، یہ کامیابی ہے لیکن میں یہ ضرور کہوں گا کہ ستمبر گیارہ کے بعد ایک نیا دہشت گردی کا کردار بدقسمتی سے شروع ہوا، خود کش حملوں کے سلسلے سے نمٹنا پڑے گا۔ پوری قوم کو مل کر امن امان نافذ کرنے والے اداروں کا ساتھ دے کر سے نمٹنا پڑے گا۔ یہ تمام کامیابیاں تھیں جن پر مجھے فخر ہے،دنیا کے رتبے کی اگر میں نے بات کی ہے تو اس کا ثبوت آپ ڈونرز کانفرنس پر نظر ڈالیں جو زلزلے کے بعد ہم نے ڈونرز کانفرنس بلائی،80 ممالک کے نمائندے اور مندوب آئے جبکہ ہمیں پانچ ارب ڈالر کی ضرورت تھی ہمیں ساڑھے چھ ارب ڈالر دینے کے وعدے کئے گئے، یہ ہمارا رتبہ تھا، یہ پاکستان کی پوزیشن تھی اور جیسے میں نے کہاکہ ان کامیابیوں پر مجھے فخر ہے۔ حکومت کو فخر ہے اور یہ تمام کامیابیاں پاکستان اور پاکستان کے عوام کیلئے کی گئیں۔

اب کچھ ان باتوں کے بعد موجودہ صورتحال پر آتے ہیں۔ پاکستان کی سیاسی دنگل میں شروع سے میری کوشش مفاہمت کی رہی ہے، یہی میری کوشش تھی کہ مفاہمت کی فضاءبنائی جائے، اس کا ثبوت میرا اپنا رویہ ذاتی سطح پر اور ادارے کی سطح پر ، ذاتی سطح پر اپنے اس رویے کی میں وضاحت نہیں کرنا چاہتا، جو میں کہنا چاہا رہا ہوں لوگ وہ سمجھیں، کوئی انتقامی کارروائی، کوئی بدلہ لینے کا رویہ اختیار نہیں کیا اور میں نے ذاتی طور پر بھی ایسا رویہ اختیار نہیں کیا، ہم تین مراحل میں تبدیلی کی بات کی تھی کہ 1999ءسے بتدریج تبدیلی لاءوں گا اور بتدریج جمہوری عمل کو فروغ دیا جائے یہی تین مرحلوں کا پروگرام چلتا رہا، اس کا تیسرا مرحلہ آیا جس میں نے بری فوج کے سربراہ عہدے کو چھوڑا اور پھر 18 فروری کو ایک بہت شفاف اور صاف انتخابات کرائی جو پوری دنیا مانتی ہے کہ اس ملک میں سب سے شفاف اور صاف انتخابات ہوئے اور ان انتخابات کے بعد بہت خوش اسلوبی سے اختیارات منتقل کر دیئے گئے۔یہ ثبوت ہے ہمارا اور میرا ذاتی طور پر یقین مفاہمت اور مفاہمت کی فضاءکو قائم کرنے کیلئے کوشش رہی۔

18 فروری کے انتخابات کے بعد عوام کی کچھ امیدیں، امنگیں اپنے منتخب نمائندوں اور حکومت کی طرف سے وابستہ ہوئیں۔ وہ کیا امیدیں تھیں؟ وہ کیا امنگیں تھیں؟، وہ چاہتے تھے کہ مسائل کا حل ملے، ماضی کو چھوڑا جائے، مستقبل کی طرف دیکھا جائے۔ پاکستان اور پاکستان کی عوام کو اور خاص طور پر غریب عوام کو ترقی کی طرف لے کر جایا جائے۔ بے روزگاری کم کی جائے، ریاستی اداروں میں ہم آہنگی لائی جائے، کشیدگی ختم کی جائے، یہ ان کی امیدیں ہیں وابستہ تھیں حکومت سے اور اپنی منتخب نمائندوں سے۔ بدقسمتی میری تمام اپیلوں، مفاہمت کی طرف اور میری اپیلوں کہ پیچیدہ مسائل کو حل کیا جائے، ماضی کو چھوڑ کر مستقبل کو دیکھا جائے اور اس کے بارے میں سوچا جائے اور تمام کوششیں ، طاقتیں پیچیدہ مسائل پر لگا کر ان پر صرف کی جائیں لیکن میرے خیال میں بڑے افسوس کے ساتھ مجھے یہ کہنا پڑتا ہے کہ میری یہ تمام کوششیں ناکامیاب ہوئیں۔ کچھ عناصر ایسے تھے جو معیشت اور اکانومی کے ساتھ دہشت گردی کے ساتھ سیاست کھیل رہے ہیں۔نقصان پاکستان کا ہے، نقصان پاکستان کی عوام کا ہے۔مفاہمت کی بجائے تصادم کی فضاءشروع ہوگئی ، ایک انتقام میں بدلہ لینے کے بہانے مجھ پرالزام لگایا گیا کہ ایوان صدر سے سازشیں ہوتی ہیں یہ بالکل بے بنیاد الزام حقائق کے بالکل برعکس اور منافی ہے، میں بتانا چاہتا ہوں کہ سب سے پہلے تو آپ یہ د یکھیں کہ شفاف اور صاف انتخابات 18 فروری کو ہوئے جس میں تمام جماعتوں اور لوگوں نے شرکت کی، حصہ لیا اور اس میں تمام لوگوں کی شمولیت میں نے ہم نے ممکن بنائی۔ اگر کوئی سازش ہوتی تو ہم یہ کیوں کرتے؟ کیوں فیئر کرتے؟کیوں سب کو انتخابات میں حصہ لینے دیتے؟ وزیراعظم کے انتخاب کو دیکھیں بلا مقابلہ کیسے انتخاب ہوگیا۔اپوزیشن نے بھی،سندھ اسمبلی کی کوششوں کو دیکھیں، ا یم کیو ایم اور پیپلز پارٹی کی اور دیگر تمام جماعتوں کی، بلوچستان کو دیکھیں یہ تمام کلچر آف ڈی سینسی دیکھیںاپوزیشن کی طرف سے، صحت مند اپوزیشن اسمبلی میں، اس میں بجٹ میں بھی پاس ہوگیا اپوزیشن نے اس کی حمایت کی، یہ تمام کیسے ممکن ہوئے؟ اگر میں سازشیں کر رہا ہوں حکومت کے خلاف اور افراد کے خلاف، میں نے عوام کے سامنے اپنی حمایت کا حکومت کیلئے اعلان کیا، وزیراعظم کیلئے حمایت کا اعلان کیا اور میں نے یہ تک کیا ہے کہ ان آٹھ سالوں میں میرا جو بھی تجربہ ہے وہ حکومت کو دینے کیلئے تیار ہوں، میری کوشش رہی ہے کہ کوئی سرمایہ ہے ، میرے اندر کوئی قابلیت ہے تو وہ میں حکومت کے حوالے کروں تاکہ جو پیچیدہ مسائل ہیں چیلنجز ہیں ، بحران ہے ، اس کی طرف میری کوشش ہو جائے حکومت کے ساتھ لیکن بدقسمتی سے اتحادی حکومت نے یہی سمجھا کہ میں ایک مسئلہ ہوں، حل نہیں۔

اب یہ میر امواخذہ کرنا چاہتے ہیں کیوں کرنا چاہتے ہیں؟ کیا یہ میرے آئینی حق سے خوفزدہ ہیں، یہ آئینی حق ہے مجھے بہت سے چیزوں کا ،کیا یہ اپنے موجودہ اور آئندہ کی غلطیاں چھپانا چاہتے ہیں کیا یہی ان کا مقصد ہے؟

میری بہنوں اور بھائیو!
مواخذہ اور چارج شیٹ دینا پارلیمنٹ کا حق ہے اور اس کا جواب دینا میرا بھی حق ہے، مجھے اپنے آپ پر یقین ہے اور اﷲ تعالیٰ پر بھروسہ ہے کہ کوئی بھی چارج شیٹ میرے مقابلے میں نہیں ٹھہر سکتی، کوئی ایک الزام بھی میرے خلاف ثابت نہیں ہوسکتا۔ مجھے اتنا اپنے آپ پر بھروسہ ہے کیونکہ میں نے اپنی ذات کیلئے کبھی کچھ نہیں کیا جو کچھ میں نے کیا وہ پاکستان کمز فرسٹ ، سب سے پہلے پاکستان، اس نظریے اور سوچ او رانداز کے ساتھ کیا۔عوام خاص طور پر غریب عوام ان کا درد ہمیشہ دل میں رکھا۔ ہر فیصلہ مشاورت سے کیا۔ تمام فریقین کو ساتھ ملا کر کیا۔ ہر فیصلے میں پیچیدہ ترین فیصلہ، خطرناک ترین فیصلہ اس میں پورے اعتماد کے ساتھ عوام کو کہتا ہوں کہ تمام فریقین کو اعتماد میں لیا اور یہ بات میری سنیں اور مانیں۔ وہ ”سٹیک ہولڈرز “ فوجی ہوں ،فوجیوں کو ہمیشہ اعتماد میں لیا۔ سیاستدان ہوں، سیاستدانوں کو اعتماد میں لیا۔بیورو کریٹس ، سول سرونٹس ہوں ان کو اعتماد میں لیا۔سول سوسائٹی کے ارکان کو اعتماد میں لےا، بلا کر ان سے مشورہ کیا، علماءکو اعتماد میں لیا جس بھی معاملے میں ان کا تعلق تھا تو تمام فریقین کو جو بھی معاملے سے متعلقہ تھے ان سے ہمیشہ مشاورت کی اور پھر فیصلوں پر پہنچے تو مجھے پورا یقین ہے کہ یہ جو چارج شیٹ ہے اس کی مجھے کوئی فکر نہیں ہے کیونکہ کوئی ایک بھی الزام میرے خلاف ثابت نہیں کیا جا سکتا اﷲ تعالیٰ کے فضل وکرم سے۔

لیکن سوال یہاں یہ اٹھتا ہے کہ مواخذہ کے اس معاملے کو ایک ذاتی انا کا مسئلہ بنایا جائے،اس کا ملک پر کیا اثر ہوگا، یہ سوال آتا ہے، یہ دو سوال اٹھتے ہیں میرے ذہن میں،کیا ملک مزید عدم استحکام ، غیر یقینی برداشت کر سکتا ہے؟ کیا ملک مزید تصادم کی فضاءسہ سکتا ہے، کیا ملک کی معیشت اور زیادہ مزید دباءو  برداشت کرسکتی ہے، کیا یہ صحیح ہوگاکہ صدر کا آفس قوم کی وحدت کی علامت ہے۔اس کو مواخذے کے عمل سے گزارا جائے کیا یہ صحیح ہوگا ، کیا یہ دانشمندانہ اقدام ہوگا، مجھے کچھ سال چند دنوں سے یہ سوالات میرے ذہن میں گھوم رہے ہیں اور میں سوچتا ہوں کی یہ شخصی مفاد میں بہادری دکھانے کا وقت نہیں۔ سنجیدگی کا وقت ہے۔ سنجیدگی سے سوچنے کا وقت ہے، مواخذے میں میں جیتوں یا ہاروں، قوم کی ہر صورت میں شکست ہوگی۔ملک کی آبرو عزت پر ٹھیس آئے گی۔ صدر کا دفتر صدر کے دفتر کے وقار کو میری نظر میں بھی ٹھیس آ سکتی ہے۔ پاکستان میرا عشق ہے، پہلے بھی اور اب بھی اس ملک کیلئے اس قوم کیلئے جان حاضر رہی۔44 سال میں نے جان کو داﺅ پر لگا کر پاکستان اور اس کی قوم کی حفاظت کی ہے اور کرتا رہوں گا۔ کچھ اور بھی خیال اور سوچ ذہن میں آتے ہیں‘ بعض اوقات سوچتا ہوں کہ ملک جس بحران سے گزر رہا ہے میں کچھ کروں‘ اس ملک کو اس بحران سے نکالوں کیونکہ مجھے یقین ہے کہ اس بحران سے ملک کو نکالا جاسکتا ہے‘ اس میں صلاحیت ہے‘ اس کی عوام میں صلاحیت ہے اور اس کو اس بحران سے نکالا جاسکتا ہے۔ بعض دفعہ سوچتا ہوں کہ میں کچھ کروں کہ اس بحران سے اس ملک کو نکالوں‘ بعض دفعہ یہ بھی سوچتا ہوں کہ کچھ ایسی چیز بھی نہ کروں جس میں کہ غیر یقینی کی فضا اور لمبی ہو جائے یہ بھی نہیں کرنا چاہیے۔ پارلیمنٹ کو ہارس ٹریڈنگ سے بچانے کا خیال بھی میرے ذہن میں آتا ہے کیوں اپنے ساتھیوں کو ایک مشکل امتحان میں ڈالوں‘ اس کا بھی خیال میرے ذہن میں آتا ہے۔ مواخذہ اگر ناکام ہو بھی جائے میری نظر میں حکومت کے تعلقات ایوان صدر سے کبھی ٹھیک نہیں ہونگے‘ کشیدگی رہے گی۔ ملکی اداروں میں کشیدگی رہے گی‘ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ ریاستی ستونوں میں یعنی پارلیمنٹ اور عدلیہ میں کشیدگی ہو جائے‘ اختلافات ہو جائیں اور خدانخواستہ فوج بھی اس معاملے میں نہ گھسیٹی جائے جو کہ میں کبھی نہیں چاہوں گا لہٰذا اس تمام صورتحال کا جائزہ لے کر اپنے قانونی مشیروں سے‘ قریبی سیاسی حمایتیوں سے مشاورت کرکے اور ان کی ایڈوائس لے کر ملک اور قوم کی خاطر میں آج عہدے سے مستعفی ہونے کا فیصلہ کرتا ہوں۔ میرا استعفیٰ آج سپیکر قومی اسمبلی کے پاس پہنچ جائے گا‘ مجھے کسی سے کچھ نہیں چاہیے‘ کوئی غرض نہیں ہے‘ میں اپنے مستقبل کو قوم اور عوام کے ہاتھوں میں چھوڑتا ہوں‘ انہیں فیصلہ کرنے دیں اور انہیں انصاف کرنے دیں۔ میں اس اطمینان اور تسلی کے ساتھ جارہا ہوں کہ میں جو کچھ بھی اس ملک‘ اس قوم‘ عوام کے لئے کر سکتا تھا وہ میں نے دیانتداری‘ ایمانداری کے ساتھ کیا‘ ہر کچھ وہ کیا ایمانداری اور دیانتداری سے لیکن میں بھی انسان ہوں‘ ہو سکتا ہے کوتاہیاں سرزد ہوئی ہوں‘ مجھے امید ہے کہ قوم اور عوام ان کوتاہیوں سے درگزر کرےں گے‘ اس یقین کے ساتھ کہ میری نیت ہمیشہ صاف رہی‘ میری نیت میں کوئی کھوٹ نہیں تھا‘ کوئی کوتاہی ہوئی ہوگی تو وہ غیر ارادی طور پر ہوئی ہوگی۔ مجھے آج جبکہ یہ تسلی ہے اور اطمینان ہے‘ مجھے رنج اور پریشانی یہ ضرور ہے کہ پاکستان تیزی سے پیچھے کی طرف جاتا ہوا نظر آرہا ہے‘ غریب عوام پسا جارہا ہے‘ اس کا مجھے دلی رنج‘ پریشانی ہے۔ مجھے امید ہے کہ حکومت ان کو ان پریشانیوں سے نجات دلانے کی طرف پوری کوشش کرے گی۔ میری دعا ہے کہ حکومت اس تنزلی کو روکے اور اس بحران سے کامیابی سے اس ملک کو اور اس ملک کے عوام کو چھٹکارہ دلائے۔

مجھے آج انتہائی خوشی ہے کہ آج میں ایک متحرک اور فعال میڈیا چھوڑ کے جارہا ہوں‘ مجھے امید ہے کہ جس طریقے سے یہ آزادی چل رہی ہے اتنی ہی ذمہ داری کے ساتھ آئندہ بھی اپنا کردار ادا کریں گے۔ میرے بہت سے حمایتی اور خیر خواہ اور کچھ آراءپر مشتمل سروے بھی یہ کہہ رہے ہیں کہ تقریباً 80,85 فیصد لوگ یہ چاہتے ہیں کہ مجھے رہنا چاہیے۔ میرے حمایتیوں کو ہو سکتا ہے کہ توقع کسی اور فیصلے کی ہو اور ہاں میں یہ بھی جانتا ہوں کہ بہت میرے حمایتی اور خیر خواہ مجھے کچھ اور راہ کی طرف کہہ رہے تھے۔ میں صرف ان سے یہ کہوں گا کہ میرے اس حقیقت پسندانہ فیصلے کو ملک و قوم کی خاطر قبول کریں۔ اگر ذاتی مفاد میں ہوتا تو میں ہو سکتا ہے کچھ اور کرتا لیکن جیسے میں نے کہا سب سے پہلے پاکستان‘ تو لہٰذا ” سب سے پہلے پاکستان“ ہمیشہ رہے گا اور میرے خیال میں اس وقت کا تقاضا یہی ہے جو میں نے فیصلہ کیا ہے۔ تمام دلائل میں نے آپ کے سامنے کھل کر دل کی آواز آپ کے سامنے کھل کر آج بتا دی ہے۔ میری نظر میں پچھلے کچھ مہینوں سے ایک خلفشار میرے ذہن میں تھا‘ میرے دل میں تھا اس قوم کے لئے‘ قوم کی عوام کے لئے میرے دل میں ہو رہا تھا کہ کس طرف جارہے ہیں‘ کہاں ہم اونچائی کی طرف جارہے تھے‘ کہاں میں سوچ رہا تھا کہ یونیورسٹیاں کھل جائیں گی یہاں‘ بچے تعلیم اور بہترین تعلیم کی طرف جائیں گے‘ عوام کی بہتری ہوگی‘ ان کی صحت بہتر ہوگی اور سماجی بہتری کی طرف جائیں گے‘ کہاں ہمیں اوپر جاتے ہوئے دنیا دیکھ رہی تھی اور اب ہم کہاں جارہے ہیں۔ مجھے امید ہے کہ میرے بغیر بھی یہ قوم ‘ یہ عوام اتنی طاقت کے ساتھ اٹھے گی جو طاقت اور صلاحیت اس ملک نے ہمیشہ دکھائی ہے چاہے 1947ءکی آزادی ہو جبکہ یہ سمجھا جارہا تھا کہ یہ ملک نہیں رہے گا لیکن یہ قوم اور عوام تھی‘ لوگ تھے‘ اس کی طاقت تھی‘ اس کی صلاحیت‘ ہمت‘ جرات تھی جو پاکستان کو آگے لے کر گئی۔ آج بھی وہی جرات ‘ وہی ہمت چاہیے۔

مجھے اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ ہم میں صلاحیت ہے‘ ہمارے پاس وسائل ہیں کہ ہم جو بھی مسائل ہیں‘ جو چیلنجز ہیں‘ جو بین الاقوامی فضا کی وجہ سے کا ہم مقابلہ کر سکتے ہیں۔ اس وقت بھی ہماری میکرو اکانومی ٹھیک ہے‘ نیچے بہت چلی گئی ہے لیکن یہ ریل جو پٹڑی سے اتری ہوئی ہے اس کو ہم واپس پٹڑی پر ڈال سکتے ہیں‘ مجھے پورا یقین ہے لیکن اگر ہم مفاہمت کی اس فضا میں نہ پڑے‘ تصادم کا شکار رہے ‘ اس ملک کو دھوکہ دیتے رہے‘ عوام کو دھوکہ دیتے رہے تو ہم کچھ کر دکھانے میں ناکام ہو جائیں گے اور میرے خیال میں اس ملک کی قیادت کو عوام کبھی معاف نہیں کرے گی۔ اس موقع پر میں افواج پاکستان‘ آرمی ‘ نیوی ‘ ایئرفورس کا تہہ دل سے شکر گزار ہوں کہ جتنی انہوں نے مجھے محبت‘ مجھے احترام‘ عزت اور میرا کہا مانا‘ اپنائیت دی میں اس کو کبھی نہیں بھول سکوں گا اور جس دلیری سے جس بہادری سے‘ جس حب الوطنی سے افواج پاکستان نے ہمیشہ اس ملک کو بچایا ‘ عوام اور لوگوں کی حفاظت کی‘ اس ملک کی حفاظت کی‘ اپنی جانوں کا نذرانہ‘ قربانیاں دی ہیں اس کے لئے تمام قوم اور میں افواج پاکستان کو سلیوٹ کرتے ہیں۔ امن و امان نافذ کرنے والے تمام ادارے‘ پولیس‘ سول آرمڈ فورسز جس دلیری اور بہادری سے دہشتگردی کا مقابلہ کرتے ہیں‘ اپنی جان کو خطرے میں ڈالتے ہیں‘ قربانیاں دیتے ہیں‘ یہ بے مثال ہے‘ میں ان کو بھی خراج تحسین پیش کرتا ہوں۔

میں شکر گزار ہوں میرے تمام سیاسی اور غیر سیاسی رفقاءکا جنہوں نے مجھے دور صدارت یا حکومت چلانے میں مدد کی‘ میرا ساتھ دیا اور مشکل وقت میں ہمیشہ میرا ساتھ دیا۔ میں ان کو کبھی بھلا نہ سکوں گا۔ میں تمام سول سرونٹس کو‘ بیورو کریٹس کا بھی شکر گزار ہوں‘ جن کے تعاون‘ جن کا کردار تمام حاصل کردہ اہداف میں حکومت کے نو سال میں‘ تعمیر و ترقی میں وہ انتہائی لائق تحسین ہے‘ میں ان سب کا بھی شکر گزار ہوں۔ میرے اپنے ساتھی ‘ میرا سٹاف جس محنت اور وفاداری کے ساتھ میرا ساتھ دیا اور میرے کام کو آسان بنایا‘ میں ان کا تہہ دل سے شکر گزار ہوں اور میں ان کو کبھی بھول نہیں سکتا۔

پھر اس قوم ‘ عوام‘ پاکستان کے عوام خاص طور پر غریب‘ انہوں نے بھی بے پناہ محبت مجھے دی اور اپنائیت دی‘ مجھے احترام دیا‘ مجھے پیار دیا‘ ان کو میں کبھی نہیں بھلا سکوں گا اور اس لئے بھی کہ میں بھی کیونکہ عوام میں سے ہوں۔ میں کسی اونچے خاندان سے نہیں آیا‘ کوئی آسمان سے زمین پر نہیں آیا ہوں‘ میں ایک مڈل کلاس آدمی ہوں اور مڈل کلاس سے ابھرا ہوں‘ میں اس عوام میں سے ہوں۔ اس لئے مجھے ان کے دکھ درد کا ہمیشہ احساس رہتا ہے اور مجھے مشکلات‘ زندگی کی مشکلات اور ان کی تکلیفوں کا ہمیشہ احساس رہتا ہے۔ اسی لئے میں کہتا ہوں کہ میں عوام میں سے ہوں اور ان کا دکھ درد ہمیشہ میرے ساتھ رہتا ہے‘ میں ان کا شکر گزار ہوں‘ ان کی حمایت کا میں تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں۔

میری ماں کی دعائیں ہمیشہ میرے ساتھ رہیں اور مجھے میری اہلیہ اور بچوں کی ہمیشہ بھرپور حمایت حاصل رہی جو بلاشبہ میرے لئے ایک طاقت ہے‘ آج بھی ان کی یہ حمایت مجھے حاصل ہے۔ میری اللہ تعالیٰ سے یہ دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ پاکستان کو اپنی حفاظت میں رکھے‘ اللہ تعالیٰ اس ملک کو سازشوں سے محفوظ رکھے‘ اللہ تعالیٰ عوام کی مشکلیں آسان کرے۔ میری جان ہمیشہ اس ملک ‘ اس قوم کے لئے ہمیشہ حاضر رہے گی جیسے پہلے رہی تھی ویسے ہی اس کے بعد بھی رہے گی۔ 
پاکستان کا اللہ حامی و ناصر ہو‘ پاکستان ہمیشہ پائندہ باد۔ (بشکریہ اے پی پی))

اختتام)